ہیڈلائنز


بابا اور ہنی پریت کے درمیان ہونے والی گفتگو منظرعام پر آ گئی

Written by | روزنامہ بشارت

نئی دہلی:  بھارت کے ”بلاتکاری بابا“ گرمیت رام رحیم سنگھ کو جب سے جیل کی سزا ہوئی ہے تب سے ہی اس کے اور ہنی پریت سنگھ کے بارے میں روز نت نئے اور شرمناک انکشافات سامنے آ رہے ہیں۔

دونوں کے بارے میں یہ انکشاف بھی ہو چکا ہے یہ صرف نام کے باپ اور بیٹی تھے کیونکہ ان دونوں کے درمیان جنسی تعلقات تھے لیکن اب یہ انکشاف بھی سامنے آیا ہے کہ ہنی پریت سنگھ کے ناصرف رام رحیم کے ساتھ جنسی تعلقات تھے بلکہ وہ اس کیلئے لڑکیوں کا بندوبست بھی کرتی تھی۔ 
”سچا سودا“ کی ایک سادھوی نے بتایا ہے کہ سنگت کے موقع پر رام رحیم لڑکیوں کا انتخاب کر لیا کرتاتھا اور پھر ہر روز وہ رات کو 10 بجے ہنی پریت کو ایس ایم ایس کرتا کہ ”ہنی۔۔۔! آج رات کیا ملے گا؟“ اور اس کے ساتھ ہی وہ اس اپنی مطلوبہ لڑکی کے بارے میں بھی آگاہ کر دیتا تھا۔ 
ہنی پریت اس کے جواب میں ایس ایم ایس کرتی کہ ”بابا جی ۔۔۔! آج آپ خوش ہو جائیں گے۔“ اور پھر وہ مذکورہ لڑکی کو رام رحیم کے پاس بھیج دیتی۔ سادھوی نے مزید بتایاکہ لڑکی کو رام رحیم کے پاس بھیجنے سے پہلے اسے گلابی رنگ کا ایک مشروب پلایا جاتا جس کے بعد وہ مدہوش سی ہو جاتی۔ جب اس سے یہ پوچھا گیا کہ کیا لڑکیاں رام رحیم کے پاس جانے سے منع نہیں کرتی تھیں؟ تو سادھوی نے کہا کہ تمام لڑکیاں اسے اپنا ’بھگوان‘ سمجھتی تھیں اور خوشی خوشی اس کے پاس چلی جاتی تھیں لیکن جب وہ ”پتا جی کی معافی“ ملنے کے بعد باہر آتیں تو انہیں ہمیشہ کیلئے ’چپ‘ لگ جاتی تھی۔

سادھوی نے کہا کہ وہ جانتی ہے کہ ”پتا جی کی معافی“ کیا ہے اور اس نے کتنی لڑکیوں کو یہ ”معافی“ دی ہے۔ اس نے ایک مرتبہ رام رحیم کو لڑکیوں کے ساتھ ننگے ڈانس کرتے بھی دیکھا تھا۔ وہ 4 سے 5 لڑکیوں کے ہاتھوں ناصرف مساج کروایا کرتا تھا بلکہ ان کی نازیبا ویڈیوز بھی بنا چکا تھا۔ ہنی پریت لڑکیوں سے کہا کرتی تھی کہ بابا ان کا ”بھگوان“ ہے اور انہیں اس کے سامنے گھٹنے ٹیک دینے چاہئیں۔

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ