اسلام آباد……چینی صدر شی چن پنگ پاکستان کا تاریخی دورہ مکمل کرکے وطن روانہ ہوگئے۔نور خان ایئربیس چک لالہ پر وزیر اعظم نواز شریف ، کابینہ کے اراکین،تینوں مسلح افواج کے سربراہان اوردیگراہم شخصیات نے معززمہمان کوالوداع کیا۔چینی صدر کا طیارہ جونہی فضا میں بلند ہواپاک فضائیہ کے 8جے ایف17 تھنڈرطیاروں نے دائیں اور بائیں چار، چار کی فارمیشن بناکراسے حفاظتی حصار میں لےکررخصت کیا۔چینی صدر کےدورہ پاکستان کے دوران اقتصادی راہ داری سمیت 51معاہدوں پر دستخط ہوئے جبکہ پاک چین تجارتی حجم 20ارب ڈالر تک لانے پر بھی اتفاق کیا گیا۔ چینی صدر نے دورہ پاکستان کےدوسرے روز آج مصروف دن گزارا، معزز مہمان نے چیئرمین سینیٹ رضاربانی اور اسپیکرقومی اسمبلی سردار ایاز صادق سے ملاقات کی اور پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے بھی خطاب کیا۔ایوان صدر میں پروقار تقریب میں چینی صدر شی چن پنگ کو پاکستان کے سب سے بڑے سول ایوارڈ’’ نشان پاکستان ‘‘سے نواز گیا۔پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے چینی صدرکا کہنا تھا کہ پاکستان اور چین کی دوستی باہمی تعاون پر مبنی ہے،چینی عوام پاکستان کی ترقی اور خوشحالی میں ہمیشہ ساتھ رہیں گے،پاک چین دوستی آنےوالے وقت میں مزید مستحکم ہوگی ، پاکستان کی ثقافتی روایات ایک جیسی ہیں،شاہراہ قراقرم 2 تہذیبوں کے درمیان ایک بندھن ہے۔ چینی صدر نے کہا کہ چین پاکستان کو اپنا آئرن برادر سمجھتا ہے۔ چینی صدر نے شاندار مہمان نوازی پر پاکستانی قوم کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانیوں کی مہمان نوازی سے میں اورمیراوفد بہت متاثر ہوا،چین پاکستان کےعوام کےلیے نیک خواہشات رکھتا ہے۔وزیراعظم نواز شریف اپنے خطاب آج کے دن کو پاکستان کی پارلیمانی تاریخ میں اہم ترین دن قراردیااور کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ چین کو پاکستان سے گہرا لگاؤ ہے،پاکستان کے تمام سیاسی رہنماؤں کا چین کے بارے میں یکساں موقف ہے۔چینی عوام ہمارے دل کے بہت قریب ہیں۔پاکستان اور چین ملکر دہشت گردی ختم کریں گے، وزیر اعظم نے کہا کہ چین کی سیکورٹی پاکستان کی سیکیورٹی ہے،پاکستان اور چین حقیقی معنوں میں آئرن برادر ہیں۔