ہیڈلائنز


چوہدری نثار نے دھماکے دار اعلان کردیا

Written by | روزنامہ بشارت

اسلام آباد:  وزیر داخلہ چودھری نثار نے کہا ہے کہ ڈان لیکس اتنا بڑا مسئلہ نہیں تھا جتنا بنادیاگیا،اس معاملے پر کمیٹی اور کمیشن بنایا گیا ،سول ملٹری تعلقات کا تماشا نہیں لگانا چاہیے۔ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا کہ سول ملٹری تعلقات نا صرف پاکستان بلکہ دنیا بھر میں حساس معاملہ ہوتاہے، سول ملٹری تعلقات کا تناظر سیاسی نہیں قومی ہے ،اس پر ہیجان انگیزی اور بلاجواز اظہار خیال اور ڈرامے بازی کی ضرورت نہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ڈان لیکس میں اگر کسی کو بچانا یا چھپانا ہوتا تو دو کمیٹیاں نہ بنتیں ،ڈان لیکس کی جو رپورٹس سامنے آئیں وہ متفقہ رپورٹس تھیں ،رپورٹس کے اعلان کے وقت سامنے آنے والے مسائل طریقہ کار کے تھے۔ چوہدری نثار نے کہا کہ وزیراعظم کے دفتر سے جاری آرڈر کی تشہیر سے مسئلے ہوئے،وزارت داخلہ نے

ہو بہو وہی نوٹیفکیشن جاری کیا جو کمیٹی کی متفقہ رپورٹ تھی ، کمیٹی کی تمام سفارشات پبلک ہوگئیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی اس سے زیادہ شفافیت کیا ہوسکتی ہے کہ ہم نے مکمل اختیارات والی کمیٹی بنائی،سات ماہ کے عرصے میں حکومت نے کسی بھی لمحے میں مداخلت نہیں کی۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ مجھے وزیراعظم کی ہدایت یہ تھی کہ کمیٹی کی سفارشات پر من وعن عمل کیا جائے،اب ہمیں آگے بڑھنا چاہیے، ملٹری لیڈر شپ سے ہماری کوئی تلخی نہیں تھی ، ایک دوسرے سے کوئی ناراضی نہیں تھی۔ وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار نے کہا ہے کہ تین ماہ میں ساڑھے تین لاکھ شناختی کارڈز بلاک ہوئے ، ایک لاکھ 74 ہزار شناختی کارڈز غیر ملکیوں کے پائے گئے جنہیں کینسل کردیا گیا۔ چوہدری نثار نے کہا کہ کارڈز کینسل کیے جانے والوں کے پاس بھی درخواست دینے کا آپشن ہے، 33 ہزار پاسپورٹس کینسل کرچکے، ان کے خلاف ایک بھی درخواست نہیں آئی۔ ان کا کہنا تھا کہ 10 ہزار شناختی کارڈز ان افراد کے بھی ہیں جنہوں نے خود کو بطور افغان رجسٹرڈ کرا رکھا ہے، ایک لاکھ 56 ہزار 440 شناختی کارڈز عارضی طورپر بحال کیے جارہے ہیں ، عارضی بحالی والے کوئی بھی ثبوت لے آئیں مستقل طورپر بحالی مل جائے گی۔ چوہدری نثار نے کہا کہ شک کی بنیاد پر شناختی کارڈ بلاک نہیں ہوگا بلکہ پہلے نوٹس دیا جائے گا۔ وزیر داخلہ نے بتایا کہ الطاف حسین کے حوالے سے ریڈ وارنٹس پر کام ہورہاہے، کچھ دستاویزات ہم نے صوبوں سے لینی ہیں ، پندرہ جون سے پہلے ریڈ وارنٹ انٹر پول کو جاری ہوجائیں گے ، ریڈوارنٹس کا قانونی پہلو بہت مضبوط ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ ایک ڈیڑھ سال سے گلگت بلتستان جانے کے لیے این او سی کا اجرا ضروری بنادیاگیا تھا، گلگت بلتستان میں سیاحت کے لیے این او سی کی ضرورت نہیں رہے گی۔ چوہدری نثار نے کہا کہ ڈپلومیٹس ، آئی این جی اوز اور پروجیکٹ سے متعلق غیر ملکیوں کو سیکورٹی کلیئرنس لینا لازمی ہوگا ۔

Sunny

30°C

اسلام آباد

Sunny
Humidity: 43%
Wind: WNW at 17.70 km/h
Saturday 25°C / 30°C Sunny
Sunday 25°C / 30°C Sunny
Monday 23°C / 30°C Sunny
Tuesday 23°C / 31°C Sunny
Wednesday 24°C / 31°C Sunny
Thursday 24°C / 30°C Sunny
Friday 24°C / 30°C Sunny

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ