ہیڈلائنز


نیب کے 100 سے زائد سینئر عہدیداروں کو شوکاز نوٹس جاری

Written by | روزنامہ بشارت

ڈائریکٹر جنرل کی پوسٹ پر ذمہ داریاں نبھانے والے چند افسران سمیت عہدیداروں کو جاری نوٹسز میں ایک ہفتے کے اندر جواب داخل کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

ان عہدیداروں کے خلاف سپریم کورٹ کے حکم پر انکوائری کی جارہی ہے جس کے لیے اسکروٹنی کمیٹی تشکیل دی گئی تھی۔

اسٹیبلشمنٹ سیکریٹری نے گزشتہ ماہ سپریم کورٹ کی جانب سے لیے گئے ازخود نوٹس پر اپنی اپنی رپورٹ پیش کی تھی۔

نیب کی جانب سے کمیٹی کے سامنے پیش کی گئی رپورٹ میں ان 100 افسران کے تفتیش کے میدان میں تجربے کی کمی کا انکشاف ہوا تھا۔

تاہم سیکریٹری نے عدالت کو کہا تھا کہ قانونی تقاضوں کو پورا کرنے کے لیے ان عہدیداروں کو شوکاز نوٹس جاری کردینا چاہیئے تاکہ ہر کسی کو انفرادی طور پر اپنی صفائی پیش کرنے کا موقع مل سکے۔

سیکریٹری کی رپورٹ کے مطابق 4 ڈائریکٹر جنرل حسنین احمد (موجودہ ڈی جی ہیڈ کوارٹرز)، زبیر شاہ (ڈی جی آپریشنز)، الطاف باوانی (ڈی جی کراچی) اور ریٹائرڈ بریگیڈیئر فاروق نصیر اعوان (ڈی جی خیبرپختونخوا) بھی موجودہ پوسٹ کے متعلقہ معیار پر پورا نہیں اترتے۔

نیب کے ڈی جی ہیڈ کوارٹرز کو 2004 میں 19ویں گریڈ میں تعینات کیا گیا، اس سے قبل وہ پنجاب میں کمیونیکیشنز اینڈ ورکس اینڈ ویٹرنری ڈپارٹمنٹ میں ایس ڈی او کے طور پر کام کررہے تھے۔

انھیں اپریل 2013 میں ڈی جی تعینات کیا گیا اور 21 گریڈ بھی دیا گیاجبکہ انھیں ڈسپلنری بنیادوں پر فوج سے خارج کرنے کو چھپانے کے الزامات کا بھی سامنا ہے۔

ڈی جی نیب آپریشنز کو 2004 میں اُس وقت 19ویں گریڈ میں تعینات کیا گیا تھا جب وہ خیبر پختونخوا کے ایک سرکاری ڈگری کالج میں استاد کی حیثیت سے خدمات سرانجام دے رہے تھے تاہم انھیں اپریل 2013 میں گریڈ 21 سے نواز کر ڈی جی بنا دیا گیا۔

ڈی جی کراچی نے 2004 میں 19 گریڈ کے افسر کی حیثیت سے نیب میں شمولیت اختیار کی اور اپریل 2013 میں انھیں ترقی دی گئی۔

وہ نیب میں شامل ہونے سے قبل بورڈ آف انوسٹمنٹ میں کام کررہے تھے۔

ڈی جی کے پی کو پاک فوج کی انجینئرنگ برانچ سے گریڈ 20 میں 2012 میں تعینات کیا گیا تھا اور اپریل 2013 میں انھیں ڈی جی بنا کر گریڈ 21 دیا گیا تھا۔

نیب ایمپلائز ٹرمز اینڈ کنڈیشنز آف سروس 2002 کے مطابق تفتیش، انکوائری، تحقیق، قانونی معاملات، ٹریننگ، آگاہی، میڈیا اور مالی جرائم کے میدان میں تفتیش کے لیے 17 گریڈ کے ڈی جی کے عہدے کے لیے 12 سالہ تجربہ لازمی ہے۔

سپریم کورٹ کے 31 مارچ کے احکامات کے مطابق نیب کے چند اعلیٰ افسران کو ‘متعلقہ تجربے’ پر پورا نہ اترنے پر گھر بھیج دیا گیا۔

احکامات کے مطابق ‘میجر ریٹائرڈ سید برہان علی، میجرریٹائرڈ طارق محمد، میجرریٹائرڈ شبیر احمد اور مس عالیہ رشید نامی افسران نیب میں متعلقہ پوسٹ رکھنے کے اہل نہیں ہیں'۔

ڈی جی راولپنڈی ناصر اقبال کی تعیناتی بھی مشکوک ہوگئی ہے کیونکہ انھیں عدالت کے حکم پر ‘متعلقہ تجربے’ پر پورا نہ اترنے والے چار ڈائریکٹر جنرل کو فارغ کیے جانے کے بعد تعینات کیا گیا تھا۔

اس سلسلے میں نیب کے ترجمان نواز علی سے رابطہ کرنے کی کئی بارکوشش کی گئی لیکن وہ موقف دینے کے لیے دستیاب نہ ہوئے۔

Mostly sunny

20°C

اسلام آباد

Mostly sunny
Humidity: 41%
Wind: W at 6.44 km/h
Sunday 11°C / 20°C Mostly sunny
Monday 11°C / 20°C Sunny
Tuesday 13°C / 18°C Partly cloudy
Wednesday 11°C / 20°C Sunny
Thursday 10°C / 20°C Sunny
Friday 11°C / 17°C Sunny
Saturday 12°C / 17°C Sunny

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ