ہیڈلائنز


سپریم کورٹ کا طیبہ تشدد کیس کا ٹرائل روکنے کا حکم

Written by | روزنامہ بشارت

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے طیبہ تشدد کیس کا ٹرائل فوری طور پر روکنے کا حکم جاری کرتے ہوئے کیس کی سماعت 21 مارچ تک ملتوی کردی۔  سپریم کورٹ میں طیبہ تشدد ازخود نوٹس کیس کی سماعت چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے کی۔ سماجی رہنما عاصمہ جہانگیر نے عدالت سے استدعا کی کہ طیبہ کیس کو کسی دوسرے صوبے یا ہائی کورٹ میں منتقل کیا جائے کیونکہ اس قسم کا کیس ریاست یا متاثرہ فریق ہی دائر کر سکتا ہے لیکن بچی کے والدین با اثر ملزمان کے ڈر اور خوف کے باعث کوئی کارروائی نہیں کرنا چاہتے، ایسی صورتحال میں ہم سب ذمہ دار ہوں گے۔چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ طیبہ تشدد کیس کو درمیان میں نہیں چھوڑیں گے، ازخود نوٹس لیا ہے تو اسے منطقی انجام تک بھی پہنچائیں گے کیونکہ یہ ایک معاشرتی مسئلہ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر شواہد پیش کرنے والے ہی کارروائی نہ کرنا چاہیں تو ہم کیا کرسکتے ہیں، والدین اورشکایت کنندہ بھی کیس کو آگے لے جانے پر راضی نہیں جب کہ کسی ملزم کو شواہد کے بغیر سزا نہیں دی جا سکتی۔ چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ایسی صورت میں ناکامی عدالتوں کی نہیں ہوگی اور نہ ہی ہم سب ذمہ دار ہوں گے۔سپریم کورٹ نے ایڈوکیٹ جنرل اسلام آباد ہائی کورٹ کو طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت 12 بجے تک ملتوی کردی۔ کیس کی دوبارہ سماعت شروع ہوئی تو عاصمہ جہانگیر کا کہنا تھا کہ طیبہ تشدد کیس میں ریاست کو ذمہ داری لینی چاہئے بچی کے والد کا ٹرائل کورٹ میں بیان سپریم کورٹ میں دیئے گئے بیان سے مختلف تھا اور یہ بھی مصدقہ اطلاع ہے ٹرائل کورٹ میں چالان بھی پیش نہیں کیا گیا۔ عاصمہ جہانگیر نے بتایا کہ مجھے حکومتی حلقوں کی جانب سے کیس سے الگ ہونے کا کہا جارہا ہے اور  اس حوالے سے عدالت کو بیان حلفی بھی دینے کو تیار ہوں۔ عاصمہ جہانگیر نے دوبارہ استدعا کی کہ کسی کو منتقل کرکے اسپیشل پراسیکیوٹر تعینات کیا جائے، جس پر چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا قانون میں اس کی گنجائش موجود ہے ٹرائل کورٹ میں کیس سننے والا جوڈیشل افسر بھی ملزم کے عہدے کے برابر ہے اور ہوسکتا ہے کہ ٹرائل کورٹ کا سربراہ ملزم کا رفیق کار بھی ہو۔ جسٹس مقبول  باقر نے کہا کہ زندگی سب سے بڑا بنیادی حق ہے اور اس کی سب سے بڑی ذمہ دار ریاست ہوتی ہے لیکن کیس کی منتقلی کے لئے ایڈوکیٹ جنرل خود  درخواست دینے سے کیوں ہچکچا رہے ہیں۔ چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ہمیں قانون کے دائرے میں رہ کر مقصد حاصل کرنا ہے اور انصاف کے تقاضوں کو پورا کرنے کے لئے معاملہ ہائی کورٹ میں بھجوا رہے ہیں۔ عدالت  نے طیبہ تشدد کیس کا ٹرائل روکنے کا حکم جاری کرتے ہوئے کہا کہ ہائی کورٹ 15 روز میں معاملے کا جائزہ لے کر کیس کی منتقلی سے متعلق واضح حکم جاری کرے۔ چیف جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ طیبہ کی حوالگی سے متعلق فیصلہ آئندہ سماعت پر کیا جائے گا لیکن ابھی بہتر ہوگا کہ بچی کو ایس او ایس ویلج بجھوا دیا جائے وہاں کوئی بھی اس کی کفالت کرے۔ عدالت نے کیس کی سماعت 21 مارچ تک ملتوی کردی ۔

Cloudy

13°C

اسلام آباد

Cloudy
Humidity: 54%
Wind: NW at 11.27 km/h
Friday 4°C / 13°C Sunny
Saturday 5°C / 13°C Sunny
Sunday 7°C / 16°C Partly cloudy
Monday 10°C / 18°C Mostly cloudy
Tuesday 13°C / 17°C Sunny
Wednesday 9°C / 17°C Sunny
Thursday 9°C / 17°C Sunny

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ