ہیڈلائنز


پانچ اہم خود مختار ادارے وزارتوں کے ماتحت کر دیئے گئے

Written by | روزنامہ بشارت

اسلام آباد : اوگرا اور نیپرا سمیت 5 ریگولیٹرز کی خود مختاری ختم کر دی گئی ، 5 اہم خود مختار ادارے وزارتوں کے ماتحت کر دئیے گئے ، بجلی ، گیس ، پٹرولیم مصنوعات کا مکمل کنٹرول اب وفاقی حکومت کے پاس ہو گا ۔ وزیر اعظم نواز شریف کی منظوری کے بعد کابینہ ڈویژن نے نوٹیفکیشن جاری کر دیا ۔ نوٹیفکیشن کے مطابق اوگرا کو وزارت پٹرولیم اور نیپرا کو وزارت پانی و بجلی ، پی ٹی اے اور فریکوئنسی ایلوکیشن بورڈ کو وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی ، پیپرا کو وزارت خزانہ کے ماتحت کر دیا گیا ، اداروں کو وزارتوں کے ماتحت کرنے کے لیے 1973کے رولز آف بزنس میں بھی تبدیلیاں کی گئی ہیں ۔ ذرائع کے مطابق مرضی کے فیصلے کرانے کیلئے ریگولیٹرز کی خود مختاری ختم کی گئی ، صوبوں کی منظوری کے بغیر ریگولیٹرز کی خود مختاری کا خاتمہ آئین کے منافی ہے ، صوبوں نے ریگولیٹرز کی خود مختاری ختم کرنے کی مخالفت کی تھی، لیکن وزارت پانی و بجلی اور پٹرولیم کے اصرار پر وزیر اعظم نے منظوری دے دی ، خود مختاری ختم ہونے کے بعد ریگولیٹرز حکومتی احکامات ماننے کے پابند ہوں گے ، آئین کے مطابق ریگولیٹرز وزارت بین الصوبائی رابطہ کے ماتحت کام کرسکتے تھے لیکن انہیں الگ الگ وزارتوں کے ماتحت کر دیا گیا ، نیپرا ، اوگرا اور پی ٹی اے کے لیگل ڈیپارٹمنٹس نے حکومتی اقدام کو غیر قانونی قرار دیدیا ۔ ورلڈ بینک نے بھی ریگولیٹرز کو متعلقہ وزارتوں کے ماتحت کرنے کی مخالفت کی تھی ، ورلڈ بینک نے ایسا کرنے پر اصلاحاتی قرضہ روکنے کی تنبیہ بھی کی تھی ، کابینہ ڈویژن کی جانب سے گیس و بجلی کے ریگولیٹرز ، نیپرا ،اوگرا کو متعلقہ وزارتوں کے ماتحت کرنے کی سمری 15 دسمبر کو مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں پیش کی جانی تھی ، لیکن 16 دسمبرکو سندھ اور خیبر پختونخوا کی مخالفت پر مجوزہ سمریوں کو ایجنڈے میں سے نکال دیا گیا تھا اور صرف نو نکاتی ایجنڈا جاری کیا گیا تھا ، جن میں ان ریگولیٹرز کی سمریاں شامل نہیں تھیں ، مجوزہ ترامیم کے مطابق ان ریگولیٹرز کو وفاقی حکومت کی طرف سے بھجوائی جانے والی ‘‘پالیسی گائیڈلائنز ’’ کا پابند بنایا جا سکے گا ۔ پاور سیکٹرز کے دونوں ریگولیٹرز نے وفاقی حکومت کی طرف سے کی جانے والی قانونی تبدیلیوں کی مخالفت کی ہے ۔ نیپرا اور وفاقی حکومت کی طرف سے حال ہی میں سالانہ بجلی ٹیرف ، نندی پور پاور منصوبہ ، لاہور مٹیاری منصوبہ اور ایل این جی کے منصوبوں سمیت کوئلہ اور شمسی توانائی کے ٹیرف میں متعد د بار تبدیلی اور اختلافات اس قانونی تبدیلی کے پیچھے چند محرکات ہیں ۔ وفاقی وزارت پانی و بجلی کے مطابق نیپرا پرائیویٹ پاور سیکٹر کو ریگولیٹ کرنے کے بجائے وفاقی وزارت پانی و بجلی کے زیر انتظام پیدا اور ترسیل ہونے والی بجلی کو ریگولیٹ کرنے پر توجہ دیئے ہوئے ہے اور جس سے وفاقی حکومت کی کارکردگی متاثر ہو رہی تھی ۔ نیپرا ایکٹ 1997میں کی جانے والی تبدیلیوں سے واقف ایک اعلیٰ افسر نے بتایا کہ وفاقی حکومت کی طر ف سے جاری کردہ پالیسی گائیڈ لائنز پر پاور ریگو لیٹر ،نیپرا اور اوگرا کیلئے بغیر کسی عذر کے عمل درآمد کرنا لازمی ہو گا ۔ ایک اور افسر کے مطابق نیپرا گزشتہ دس برس سے وفاقی حکومت کی طرف سے کی جانے والی من مانیوں کی مخالفت کرتی رہی ہے ، جس میں پاور و گیس کے نظام کے حد سے زائد نقصانات اور بلوں کی غیر وصولیاں شامل ہیں ، جبکہ وفاقی حکومت ان دونوں سے بچنے کیلئے ہمیشہ سرچارجز عائد کر کے نقصانات کو پورا کرتی رہی ہے ۔ اسی طرح اوگرا جو کہ ہمیشہ حکومتی پالیسیوں کی مخالفت کرتی رہی ہے ، کے ایکٹ میں تبدیلیاں بھی تجویز کی گئی ہیں ، جس کے تحت اتھارٹی کیلئے وفاقی حکومت پالیسی گائیڈ لائنز پر عملدرآمد کرنا لازمی ہو گا ۔ واضح رہے کہ وفاقی حکومت بجلی اور پٹرولیم کی وزارتوں کو ایک ہی وزارت میں ضم کرنا چاہتی تھی اور وفاقی حکومت کے سالانہ پلان 2015-16 میں ان دونوں ریگو لیٹرز کے ادغام کی تجویز پیش کی گئی تھی

Clear

26°C

اسلام آباد

Clear
Humidity: 78%
Wind: NNW at 11.27 km/h
Saturday 25°C / 30°C Thunderstorms
Sunday 23°C / 29°C Thunderstorms
Monday 22°C / 28°C Thunderstorms
Tuesday 23°C / 28°C Thunderstorms
Wednesday 23°C / 28°C Thunderstorms
Thursday 22°C / 26°C Thunderstorms
Friday 21°C / 26°C Thunderstorms

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ