ہیڈلائنز


پاناما کیس کی سماعت شریف خاندان کے گرد گھیرا تنگ

Written by | روزنامہ بشارت

پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے 30 اکتوبر کو اسلام آباد میں دھرنے سے چند روز قبل سپریم کورٹ 20 اکتوبر کو وزیراعظم نواز شریف اور ان کے اہل خانہ کی نااہلی کے حوالے سے پاناما کیس کی سماعت کرے گی۔تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں چیف جسٹس انور ظہیر جمالی، جسٹس اعجاز الحسن اور جسٹس خلجی عارف حسین پر مشتمل تین رکنی بنچ پاناما پیپرز اسکینڈل کے حوالے سے دائر پانچ مختلف درخواستوں کی سماعت کرے گا۔سپریم کورٹ سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ وزیر اعظم نواز شریف، ان کے داماد اور وزیر خزانہ اسحٰق ڈار کو نااہل قرار دے۔سپریم کورٹ ایک ایک کرکے پی ٹی آئی، جماعت اسلامی، ایڈووکیٹ طارق اسد، وطن پارٹی کے بیرسٹر ظفر اللہ خان اور آل پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کی جانب سے دائر کی جانے والی درخواستوں کی سماعت کرے گی۔سینئر وکیل حامد خان اور نعیم بخاری پی ٹی آئی کی نمائندگی کریں گے جبکہ اسد منظور بٹ جماعت اسلامی کی پیروی کریں گے اس کے علاوہ دیگر درخواست گزار بذات خود عدالت میں پیش ہوں گے۔

پی ٹی آئی وزیر اعظم، ان کے داماد ریٹائرڈ کیپٹن محمد صفدر اور وزیر خزانہ اسحٰق ڈار کے مبینہ طور پر پاناما اسکینڈل میں ملوث ہونے کے الزام میں ان کی نااہلی چاہتی ہے۔پی ٹی آئی نے عدالت پر زور دیا ہے کہ وہ مبینہ طور پر لوٹ کر ملک سے باہر بھیجی گئی رقم کی واپسی کے احکامات جاری کرے اس کے علاوہ برٹس ورجن آئی لینڈز اور دیگر ملکوں میں قائم کی جانے والی کمپنیوں اور ان کے ذریعے خریدی جانے والی جائیداد کا بھی حساب لیا جائے۔جبکہ جماعت اسلامی کی جانب سے پارٹی کے امیر سراج الحق نے سپریم کورٹ کو دی جانے والی درخواست میں زور دیا ہے کہ عدالت وزارت پارلیمانی امور، انصاف و قانون کے سیکریٹریز، وزارت خزانہ، کابینہ ڈویژن اور قومی احتساب بیورو کے ذریعے وفاقی حکومت کو ہدایت کرے کہ وہ پاناما اسکینڈل میں ملوث ملزمان کو گرفتار کریں اور عوام کے پیسہ واپس پاکستان لائیں کیوں کہ یہ پیسہ غیر قانونی طریقے سے پاکستان سے آف شور کمپنیوں میں منتقل ہوا۔اس کے علاوہ ایڈووکیٹ طارق اسد نے اپنی درخواست میں موقف اختیار کیا ہے کہ وزیر اعظم نواز شریف کے اہل خانہ اور دیگر افراد کی جانب سے آف شور کمپنیوں کے ذریعے کی جانے والی سرمایہ کاری کی تحقیقات کے لیے اعلیٰ سطح کا جوڈیشل کمیشن تشکیل دیا جائے۔انہوں نے موقف اپنایا کہ کمیشن منی لانڈرنگ میں مبینہ طور پر ملوث وزیر اعظم کے اہل خانہ کو ہی نہیں بلکہ منی لانڈرنگ اور ٹیسک چوری میں مبینہ طور پر ملوث ریٹائرڈ جنرل پرویز مشرف ، سابق صدر آصف علی زرداری، سابق وزیر داخلہ رحمٰن ملک ، ملک ریاض، سیف اللہ خاندان و دیگر کو بے نقاب کرنے میں بھی معاون ثابت ہوگا۔

بیرسٹر ظفر اللہ خان نے اپنی پٹیشن میں سپریم کورٹ سے استدعا کی ہے کہ اس معاملے کی تحقیقات کے لیے پارلیمانی کمیٹی یا پینل تشکیل دیا جائے اور اگر پارلیمنٹ میں اس معاملے پر اخلاف رائے پایا جائے تو سیاسی جماعتوں کو وزیر اعظم کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک لانی چاہیے۔شیخ رشید نے سپریم کورٹ سے درخواست کی ہے کہ میموگیٹ کمیشن کی طرز پر انکوائری کمیشن تشکیل دیا جائے جو وزیر اعظم نواز شریف کے اہل خانہ پر لگنے والے الزامات کی تحقیقات کرے

Partly cloudy

28°C

اسلام آباد

Partly cloudy
Humidity: 73%
Wind: WNW at 11.27 km/h
Wednesday 23°C / 28°C Thunderstorms
Thursday 23°C / 28°C Thunderstorms
Friday 22°C / 26°C Thunderstorms
Saturday 21°C / 27°C Thunderstorms
Sunday 22°C / 29°C Thunderstorms
Monday 23°C / 29°C Sunny
Tuesday 23°C / 29°C Sunny

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ