ہیڈلائنز


بے اختیار کمیشن بدنامی کا باعث بنے گا:چیف جسٹس

Written by | روزنامہ بشارت

حکو متی ٹی او آرز اتنے وسیع ہیں کہ تحقیقات میں کئی سال لگ جا ئینگے ، جن افراد، خاندانوں، گروپس اور کمپنیوں کے خلاف تحقیقات کر نی ہیں ان کی تعداد اور متعلقہ کوائف ہونے چا ہئیں

جب تک مناسب قانون سازی کے تحت کمیشن بنانے کے معاملے کو حل نہیں کر لیا جاتا حکومت کی درخواست کا حتمی جواب نہیں دیا جا سکتا :رجسٹرار سپریم کورٹ کا سیکرٹری قانون کو خط  چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس انور ظہیر جمالی نے قر ار دیا ہے کہ جب تک مناسب قانون سازی نہیں کی جاتی کمیشن قائم نہیں کیا جا سکتا۔ عدالتی کمیشن کی تشکیل کے لیے وزیر اعظم کی جانب سے لکھے گئے خط کا جواب دیتے ہوئے چیف جسٹس نے اس سلسلے میں حکومت سے مکمل کوائف اور معلومات طلب کر لیں ۔ چیف جسٹس کا خط گزشتہ روز رجسٹرار سپریم کورٹ کی جانب سے سیکرٹری قانون کو بھجوایا گیا ۔ خط کے مطابق فاضل چیف جسٹس نے حکومت کو اپنے جواب میں لکھا ہے کہ حکومت نے اپنی درخواست میں جو ٹی او آرز دیئے ہیں وہ اتنے وسیع ہیں کہ ان کے مطابق تحقیقات میں کئی سال لگ جائیں گے ، پاکستان کمیشن آف انکوائری ایکٹ 1956 کے تحت محدود دائرہ کار میں اگر کمیشن تشکیل دیا گیا تو وہ ایک بے اختیار کمیشن ہوگا جس سے مقصد حاصل نہ ہو پائے گا البتہ بدنامی کا باعث ضرور بنے گا۔چیف جسٹس کی طرف سے کہا گیا کہ مجوزہ کمیشن بنانے یا نہ بنانے سے متعلق کوئی رائے قائم کرنے سے پہلے یہ ضروری ہے کہ جن افراد، خاندانوں، گروپس اور کمپنیوں کے خلاف تحقیقات کی جانی ہیں ان کی تعداد اور ان سے متعلقہ کوائف موجود ہوں جب تک ایسی معلومات اور کوائف فراہم نہیں کیے جاتے اور کسی مناسب قانون سازی کے تحت کمیشن بنانے کے معاملے پر نظر ثانی کر کے اسے حل نہیں کر لیا جاتا، اس وقت تک حکومت کی درخواست کا حتمی جواب نہیں دیا جا سکتا۔

 

Partly cloudy

8°C

اسلام آباد

Partly cloudy
Humidity: 61%
Wind: NNW at 17.70 km/h
Saturday 5°C / 14°C Sunny
Sunday 8°C / 16°C Partly cloudy
Monday 10°C / 19°C Partly cloudy
Tuesday 11°C / 19°C Sunny
Wednesday 11°C / 18°C Sunny
Thursday 10°C / 17°C Sunny
Friday 10°C / 18°C Sunny

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ