ہیڈلائنز


مردوں کے سرمئی بال امراض قلب کا خطرہ بڑھانے کا سبب بنتے ہیں

Written by | روزنامہ بشارت

اس تحقیق میں 545 سے زائد مختلف بالوں کی رنگت کے حامل مردوں کا جائزہ لیا گیا۔

جائزے میں سرمئی، کالے، سفید اور براؤن یا سرخ رنگ کے بال رکھنے والے افراد میں مختلف بیماریوں کے ہونے، بڑھنے یا کم ہونے کو جانچا گیا۔

یونیورسٹی کے کارڈیولوجسٹ ڈاکٹر ایرینی سیموئل کی نگرانی میں ہونے والی اس تحقیق میں مردوں کو 2 مختلف گروپوں میں تقسیم کیا گیا۔

ایک گروپ میں ان افراد کو شامل کیا گیا جنہیں پہلے ہی شریان اور دل کے عارضے سے متعلق شکایات تھیں اور ایک گروپ میں بیماریوں سے پاک افراد کو شامل کیا گیا۔

تمام افراد کے بالوں کے رنگوں کا جائزہ لے کر بالوں کی رنگت کے حساب سے ہائی بلڈ پریشر، ذیابیطس، خون کی غیر معمولی نقل و حرکت اور دمے وغیرہ کی بیماریوں کی سطح کا جائزہ لیا گیا۔

جائزے کے نتائج کے مطابق اُن افراد میں امراض قلب کا زیادہ امکان تھا، یا انہیں کسی نہ کسی حد تک دل سے متعلق امراض کی شکایت تھی، جن کے بال سرمئی یا ہلکے سفید تھے۔

نتائج میں بتایا گیا کہ جن افراد کے بال قدرتی طور پر سرمئی یا ہلکے سفید ہوتے ہیں، ان افراد کو دل کی بیماریاں لاحق ہونے کے خطرات ہوتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق اس میں کوئی شک نہیں کہ جن افراد کے بال قدرتی طور پر سرمئی یا ہلکے سفید ہوتے ہیں، ان کی عمر بھی زیادہ ہوتی ہے، ایسے افراد کی عمومی عمر 50 سال کے ارد گرد ہوتی ہے، اور اس عمر میں بیماریاں ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

تحقیق میں یہ نہیں بتایا گیا کہ اگر کوئی مرد اپنے بالوں کا رنگ مصنوعی طور پر سرمئی کرواتا ہے، تو اس کے صحت پر کیا اثرات پڑیں گے۔

واضح رہے کہ یہ تحقیق اور نتائج صرف اُن افراد کے ہیں، جن کے بالوں کا رنگ قدرتی طور پر سرمئی یا ہلکا سفید ہوتا ہے۔


Read Basharat Online

 

 

PentaBuilders

روزنامہ بشارت ٹویٹر


Follow Daily_Basharat on Twitter

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ