ہیڈلائنز


آٹو انڈسٹری اور آئل انڈسٹری بوکھلاہٹ کا شکار

Written by | روزنامہ بشارت

ہونڈا اٹلس کار( پاکستان) لمیٹڈ نے اوگرا میں شکایت درج کرائی تھی جس میں یہ موقف اختیار کیا گیا تھا کہ پیٹرولیم کی مصنوعات میں میگنیز کی زیادہ مقدار سے ان کی گاڑیوں کے انجن کو نقصان پہنچ رہا ہے۔

انڈس موٹر کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر(سی ای او) علی اصغر جمالی کا کہنا تھا کہ انہیں گاڑیوں کے انجن میں ایندھن کی وجہ سے پیدا ہونے والی خرابی کے حوالے سے کوئی شکایت موصول نہیں ہوئی۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ان کی کمپنی کے پاس 4 مختلف اقسام کے انجم ہیں اور تمام ہی یورو ٹو ٹیکنالوجی کے حامل ہیں اور ان میں سے کسی بھی انجن کے حوالے سے شکایت موصول نہیں ہوئی۔

پاک سوزوکی کمپنی کے اعلیٰ عہدیدار نے بھی یہی کہا کہ کمپنی کو انجن میں ایندھن کی وجہ سے خرابی کی کوئی شکایت موصول نہیں ہوئیں۔

تاہم ہونڈا کمپنی کے ایک اعلیٰ عہدیدار نے اپنا نام نہ ظاہر کرنے کی درخواست پر بتایا کہ ہونڈا کمپنی کے انجن یورو 4 قسم کے ہیں، جن کے لیے مزید ریفائنڈ ایندھن کی ضرورت ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ کمپنی گزشتہ ایک دہائی سے یورو 4 ٹیکنا لوجی کے حامل انجن تیار کر رہی ہے تاہم کم ریفائنڈ ایندھن کی وجہ سے نہ صرف انجن میں مسائل پیدا ہورہے ہیں بلکہ اس سے گاڑی کے استعمال شدہ ایندھن کے دھوئیں کے اخراج کے نظام میں بھی خرابی پیدا ہورہی ہے۔

ہونڈا کے اعلیٰ عہدیدار نے بتایا کہ کمپنی نے انجن کو تشخیص کے لیے جاپان اور پاکستان میں فروخت ہونے والے پیٹرول کو جرمنی بھیجا جس میں یہ معلوم ہوا کہ پاکستانی مارکیٹ میں ملنے والے پیٹرول میں سلفر اور میگنیز کی مقدار بہت زیادہ ہے۔

ادھر آئل کمپنیوں اور ریفائنریز کے نمائندہ ادارے مشورتی کونسل برائے آئل کمپنی (او سی اے سی) نے ہونڈا کی جانب سے اوگرا کو دی جانے والی شکایت پر سخت ردِ عمل دیتے ہوئے اعلامیہ جاری کیا جس میں کہا گیا کہ ’ہم یہ بتانا چاہتے ہیں کہ پاکستان میں فروخت ہونے والا ایندھن وزارت توانائی اور پیٹرولیم کی جانب سے منظور شدہ وضاحتوں کے عین مطابق ہے لہٰذا غیر معیاری ایندھن کی فروخت کا سوال ہی پیدا نہیں ہونا چاہیے‘۔

او سی اے سی کے صدر آفتاب حسین نے کہا کہ ہم میگنیز سے متعلق نمونے جمع کر رہے ہیں تاہم اس پر تحقیق کے بعد ہی مزید کچھ کہا جاسکتا ہے۔

واضح رہے کہ ایندھن کے معیار کو بہتر بنانے کے لیے میگنیز ملایا جاتا ہے جس سے ایندھن کا خرچ کم ہوتا ہے تاہم اس کے اخراج سے انسانی صحت پر خطرناک اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

تازہ ترین خبریں

کالم / بلاگ